Topics

فلم کا عکس۔ ماہنامہ قلندر شعور ۔جولائی 2015


اللہ قادر مطلق ہے ہر شے اس کے احاطہ میں ہے۔ رات اور دن پر اس کی حاکمیت ہے۔ وہ احکم الحاکمین ہے۔ جو چاہتے ہیں ظہور ہوجاتا ہے۔ اللہ تعالیٰ کے ذہن سے باہر عالمین یعنی کروڑوں دنیائیں، لاکھوں سورج چاند، نظر کی وسعت میں آنے والے دس ہزار ستارے، سات آسمانی دنیائیں،ہر دنیا اتنی وسعت رکھتی ہے کہ شعور اور لاشعور کے لئے کسی بھی طرح شمار ممکن نہیں۔ رب ذوالجلال فرماتے ہیں سارے درخت اور ان کی شاخیں قلم بن جائیں اور تمام سمندر روشنائی بن جائیں۔۔۔ اللہ کی باتیں لکھی جائیں تو سمندر کے پانی سے بنائی ہوئی روشنائی ختم ہوجائے گی اور درختوں کے تنے، شاخیں، ٹہنیوں سے بنے ہوئے قلم ختم ہوجائیں گے مگر اللہ کی باتیں ختم نہیں ہوں گی۔

"اور اگر یوں ہو کہ زمین میں جتنے درخت ہیں (سب کے سب) قلم ہوں اور سمندر) کا تمام پانی(سیاہی اور اس کے بعد سات سمندر اور سیاہی ہوجائیں تو بھی اللہ کی باتیں ختم نہ ہوں گی، بے شک اللہ غالب حکمت والا ہے۔ " (27:31(

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آدمی کی نہیں۔۔۔ انسان کی زندگی کو رواں دواں رکھنے والی نورانی مشین کا اگر محدود عقل و شعور سے بیان کیا جائے تو ہر آدمی کے ساتھ 20 ہزار فرشتے ہمہ وقت مصروف اور متحرک رہتے ہیں۔ یہ بات اس طرح بھی بیان کی جاسکتی ہے کہ آدمی گوشت پوست اور ہڈیوں سے بنا ہوا ایک پتلا ہے، اس پتلے کو متحرک رکھنے کے لئے 20 ہزار معاونین ہمہ وقت مصروف عمل ہیں۔ سمجھنے کے لئے کہا جاسکتا ہے کہ آدمی کٹھ پتلی ہے۔ کٹھ پتلی کو چلانے، گردن ہلانے اور اعضا کی حرکت کے لئے ایک پتلی میں 20 ہزار ڈوریاں بندھی ہوئی ہیں اور ان ڈوریوں کا میکانزم یہ ہے کہ ہر حرکت ارادہ کے تابع ہے ۔ انسان صرف ارادہ کرسکتا ہے۔ جیسے ہی کوئی جان ارادہ کرتی ہے حرکت کا مظاہرہ ہوتا ہے۔

بظاہر حرکت آدمی کے تابع ہے۔۔۔ درحقیقت ایسا نہیں ہے بلکہ حرکت ارادہ کے تابع ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس بات کو مثال سے سمجھنا آسان ہے۔ ہر مخلوق احتیاج کے تابع ہے اور یہ امر مجبوری ہے۔ جیسے پانی پینے سے پہلے پیاس کا خیال۔۔۔ یعنی پانی پینے کی احتیاج ذہن میں آئے گی۔ ذہن میں آنے کے بعد انسان ارادہ کرے گا۔ اس ارادہ کی تکمیل کے لئے مقررہ فرشتے بندے کو پانی کی طرف متوجہ کریں گے اور پانی کی احتیاج پوری کرنے کے لئےفرشتے اس کے ہاتھ سے گلاس اٹھوائیں گے اور اس پتلے سے پانی کے گلاس میں پانی ڈلوا کر گلاس کو اس کے منہ کو لگادیں گے۔ ہر شے اس قانون کی پابند ہے۔ جو نیت ہوتی ہے۔ اس نیت میں عمل کے دو رخ ہیں۔ ایک رخ اللہ تعالیٰ کے قانون کے مطابق پسندیددہ ہے اور عمل اگر انبیاء علیہم السلام کی شریعت کے مطابق نہ کیا جائے تو ناپسندیدہ ہے۔۔۔ یہ بات اس طرح سمجھ میں آتی ہے کہ فرد متعینہ احسن طریقوں پر کوئی بھی شے استعمال کرتا ہے پسندیدہ عمل ہے۔۔۔ احسن طریقوں کے خلاف کیا گیا عمل ناپسندیدہ اور شیطنت ہے۔ زندگی کی ادھیڑبن کی جائے تو اس قانونی کی وضاحت ہوجائے گی۔

خواتین و حضرات! جو بات سمجھ میں نہیں آتی ذہنی یکسوئی کے ساتھ اگر تفکر کیا جائے تو ذہن رہنمائی کرتا ہے۔ اس کی لاشمار مثالیں ہیں مثلاً ایک شخص دوسرے شخص کے گھر میں موجود ہے جب واپس آتا ہے تو کوئی چیز اٹھالیتا ہے۔ اس صورت میں محاسبہ کیا جائے تو یہ عمل چوری شمار ہوگا۔

قانون۔۔۔ جب بھی کوئی غلط کام کیا جاتا ہے، ضمیر منع کرتا ہے۔ اگر ضمیر کی خلاف ورزی کی جائے تو ضمیر ملامت کرتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عام تاثر یہ ہے کہ ہم جو کچھ دیکھتے ہیں آنکھوں کے سامنے باہر دیکھتے ہیں۔ لیکن اس نکتہ کو اس طرح لکھنا وضاحت ہے کہ ہم باہر نہیں دیکھتے۔ دماغ کے اندر چیزوں کا عکس دیکھتے ہیں۔ ایک ناقص مثال یہ ہوسکتی ہے کہ پروجیکٹر پر فلم نشر ہورہی ہے اور نشریات ہمیں فلم سے مخصوص فاصلہ پر نظر آتی ہیں۔ لیکن ناظرین یہ سمجھتے ہیں کہ جو کچھ دیکھ رہے ہیں وہ اسکرین پر دیکھ رہے ہیں جبکہ اسکرین پر ناظرین عکس دیکھ رہے ہیں۔ اگر پروجیکٹر سے فلم ہٹالی جائے تو کچھ بھی نظر نہیں آتا۔ براہِ راست طرز کلام یہ ہے کہ فلم دیکھنے والے ناظرین اسکرین پر جو کچھ دیکھ رہے ہیں وہ عکس ہیں۔ یہ بھی غور طلب ہے کہ اسکرین پر جو تصویر ہم دیکھ رہے ہیں فلم کا عکس روشنی کی لہروں میں تقسیم ہو کر اسکرین پر نظر آرہا ہے۔

محترم قارئین! سمجھنا یہ ہے کہ فلم کے کردار اصل ہیں۔۔۔ ذرا ذہن پر زور ڈالیئے۔۔۔ جو مناظر اسکرین پر نظر آرہے ہیں ان کا مادی وجود نہیں ہے جو اصل ہیرو، ہیروئن کا ہے۔

اس بات کو اس طرح بیان کیا جائے کہ ایکٹر کا عکس فلم پر منتقل ہوا اور روشنی کی بڑی مقدار نے ایک انچ فلم کے نقش و نگار کو لہروں کی شکل میں 10 یا 12فٹ بڑی اسکرین پر دکھایا۔

اس بات کو پھر سمجھئے۔ تقریباً ایک انچ فلم میں بنے ہوئے نقش و نگار روشنی میں پھیل کر اسکرین پر مظاہرہ کرتے ہیں۔

محترم قارئین براہ راست دیکھنا اور بالواسطہ دیکھنا کیا ہے۔۔۔؟ آپ لکھئے۔

قارئین "ماہنامہ قلندر شعور" انشاء اللہ پڑھ کر خوش ہوں گے۔

بزرگوں سے دعاؤں کی درخواست، بڑوں کو سلام اور بچوں کو بہت پیار۔

اللہ حافظ



خواجہ شمس الدین عظیمی

جولائی 2015

Topics


Aaj Ki Baat

خواجہ شمس الدين عظيمي

اور جو لوگ ہماری خاطر مجاہدہ کریں گے انہیں ہم اپنے راستے دکھائیں گے۔ (سورۂ عنکبوت 69(

اللہ تعالیٰ کی مدد اور اولیاء اللہ کے فیض سے ماہنامہ"قلندر شعور" کے ذریعے ہم آپ تک ایسے مضامین پہنچائیں گے جن کے ذریعے اللہ اور اس کے رسول ﷺ تک رسائی حاصل ہوتی ہے۔ بندہ یہ جان لیتا ہے کہ اللہ اسے دیکھ رہا ہے اور بندہ یہ د یکھ لیتا ہے کہ وہ اللہ کو دیکھ رہا ہے۔

اس ماہنامہ میں انشاء اللہ تسخیر کائنات سے متعلق قرآنی تفہیم، خلاء میں سفر کرنے کے لئے جدید تحقیقی مضامین، حمد اور نعتیں، اصلاحی افسانے، پی ایچ ڈی مقالوں کی تلخیص، سائنسی، علمی، ادبی، سماجی، آسمانی علوم، خواب۔۔۔ ان کی تعبیر، تجزیہ و مشورہ پیش کئے جائیں گے۔

دعا کی درخواست ہے اللہ تعالیٰ ادارہ "ماہنامہ قلندر شعور" کو ارادوں میں کامیاب فرمائیں۔